مر ن چوک پلوامہ میں بندوق بردار نمودار ، ایس پی او پر اندھا دھند فائرنگ کرکے ہلاک کیا

0
50

سرینگر//بندوق برداروں نے مرن چوک پلوامہ میں ایس پی او پر اندھا دھند فائرنگ کی جس کے نتیجے میں اُس کی موقعے پر ہی موت واقع ہوئی ۔ پولیس ذرائع نے اسکی تصدیق کرتے ہوئے کہاکہ آس پاس علاقوں کو محاصرے میں لے کر حملہ آوروں کی تلاش شروع کی گئی ہے۔ ادھر کے پی روڑ اننت ناگ میں عسکریت پسندوں نے ڈیوٹی پر مامور اہلکار پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں وہ شدید طورپر زخمی ہوا۔ دریں اثنا پولیس کے ایک سینئر آفیسر نے کہاکہ جنوبی کشمیر میں عسکری کارروائیوںمیں تیزی آنے کے بعد سیکورٹی کا نئے سرے سے جائزہ لیا جارہا ہے۔ جے کے این ایس کے مطابق مرن چوک پلوامہ میں اُس وقت سنسنی اور خوف ودہشت کا ماحول پھیل گیا جب بندوق برداروں نے ایس پی او محمد اشرف ساکنہ مستونہ پلوامہ حال چھانہ پورہ سرینگر پر اندھا دھند فائرنگ کی جس کے نتیجے میں اُس کی موقعے پر ہی موت واقع ہوئی ۔ نمائندے کے مطابق ایس پی او کی ہلاکت کے بعد سیکورٹی فورسز نے مرن چوک پلوامہ اور اُس کے ملحقہ علاقوں کو محاصرے میں لے کر حملہ آوروں کی بڑے پیمانے پر تلاش شروع کی ہے۔ پولیس ذرائع کے مطابق محمد اشرف نامی ایس پی او کارگوسرینگر میں اپنی خدمات انجام دے رہا تھا۔ ادھر کے پی روڑ اننت ناگ میں اُس وقت سراسیمگی پھیل گئی جب عسکریت پسندوں نے ڈیوٹی پر مامور پولیس اہلکار پر فائرنگ کی جس کے نتیجے میں وہ خون میں لت پت ہوا۔ نمائندے کے مطابق ایس پی او تراگ سنگھ کو فوری طورپر ضلع اسپتال منتقل کیا تاہم ڈاکٹروں نے اُس کی حالت نازک قرار دے کر سرینگر منتقل کیا ۔ معلوم ہوا ہے کہ اسپتال میں پولیس اہلکار کی حالت مستحکم بتائی جار ہی ہے۔ جنوبی کشمیر میں یکے بعد دیگرے پولیس اہلکاروں کو نشانہ بنانے کے بعد پورے جنوبی کشمیر میں الرٹ جاری کردیا گیا ہے۔ ذرائع کے مطابق جنوبی کشمیر کے حساس اضلاع پلوامہ ، شوپیاں، کولگام اور اننت ناگ میں جموںوکشمیر پولیس اہلکاروں کو متحرک رہنے کے احکامات صادر کئے گئے ہیں ۔ نمائندے کے مطابق جموںوکشمیر پولیس اہلکاروں کو احکامات صادر کرتے ہوئے کہاکہ گیا کہ وہ ڈیوٹیوں کے دوران متحرک رہے تاکہ عسکریت پسندوں کے امکانی حملوں کو ٹالا جاسکے۔ ذرائع نے بتایا کہ جنوبی کشمیر میں عسکریت پسندوں کی جانب سے پولیس اہلکاروں کو نشانہ بنانے کے بعد سیکورٹی سے وابستہ سینئر آفیسران کی ایک میٹنگ منعقدہوئی جس دوران سرگرم عسکریت پسندوں کے حرکات و سکنات پر نظر گزر رکھنے کے احکامات صادر کئے گئے ہیں۔ معلوم ہوا ہے کہ جنوبی کشمیر میں سیکورٹی صورتحال کا از سر نو جائزہ لیا جارہا ہے اور سرگرم عسکریت پسندوں کے خلاف بڑے پیمانے پر آپریشن آل آوٹ شروع کرنے کو ذرائع نے خارج از امکان قرار نہیں دیا۔

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here